72

کنٹونمنٹ بورڈز انتخابات، پی ٹی آئی نے تمام سیاسی جماعتوں سمیت آزاد امیدواروں کو بھی پیچھے چھوڑ دیا.

کنٹونمنٹ بورڈز انتخابات، پی ٹی آئی نے تمام سیاسی جماعتوں سمیت آزاد امیدواروں کو بھی پیچھے چھوڑ دیا.

(ڈیلی طالِب)
غیر سرکاری نتائج کے مطابق حکمراں جماعت 49 امیدواروں کی کامیابی کے ساتھ پہلے نمبر پر آ گئی، آزاد امیدواروں نے 47، مسلم لیگ ن نے 31 اور پاکستان پیپلز پارٹی نے 12 سیٹوں پر کامیابی حاصل کی.

کنٹونمنٹ بورڈز انتخابات، غیر سرکاری غیر حتمی نتائج کا سلسلہ جاری، پی ٹی آئی نے تمام سیاسی جماعتوں سمیت آزاد امیدواروں کو بھی پیچھے چھوڑ دیا، حکمراں جماعت 49 امیدواروں کی کامیابی کے ساتھ پہلے نمبر پر آ گئی- غیر سرکاری غیر حتمی نتائج کے مطابق ملک بھر میں جاری کنٹونمنٹ بورڈز انتخابات میں پی ٹی آئی کے امیدواران نے سب سے زیادہ 49 سیٹوں پر کامیابی حاصل کرکے سب کو پیچھے چھوڑ دیا ہے- اس سے قبل جو نتائج سامنے آئے تھے، ان میں بتایا گیا تھا کہ پی ٹی آئی کے امیدوارون نے 37 سیٹوں پر کامیابی حاصل کی ہے، جبکہ 39 سیٹوں پر آزاد امیدوار کامیاب ہوئے، تاہم اب حکمراں جماعت پی ٹی آئی نے آزاد امیدواروں کو بھی پیچھے چھوڑتے ہوئے، سب سے زیادہ 49 سیٹیں جیت لیں ہیں- غیر سرکاری نتائج کے مطابق آزاد امیدواروں نے 47 سیٹوں پر کامیابی حاصل کی ہے، دوسری جانب مسلم لیگ ن نے 31 اور پاکستان پیپلز پارٹی نے 12 سیٹوں پر کامیابی حاصل کی ہے- کنٹونمنٹ بورڈز کے انتخابات میں مجموعی طور پر ایک ہزار 559 امیدوار میدان میں آئے، سب سے زیادہ 180 امیدوار پی ٹی آئی نے اتارے، مسلم لیگ (ن) کے 143، پیپلز پارٹی 112، جماعت اسلامی 104، کالعدم تحریک لبیک پاکستان 86، اللہ اکبر تحریک کے 74 ، ایم کیو ایم کے 42، پی ایس پی 35، (ق) لیگ 34 اور جے یوآئی کے 25 امیدواروں نے انتخابات میں حصہ لیا، اس کے علاوہ 659 آزاد امیدوار نے بھی کنٹونمنٹ بورڈ الیکشن میں قسمت آزمائی کی۔

امن وامان کو یقینی بنانے کے لیے پولنگ اسٹیشنز پر پولیس تعینات رہی جب کہ پولنگ اسٹیشنز کی حدود کے باہر رینجرز اور ایف سی اہل کار بھی موجود تھے۔ رینجرز اور ایف سی کے انچارج افسران کو مجسٹریٹ کے اختیارات تفویض کیے گئے۔ حساس ترین پولنگ اسٹیشنز کے اندر سی سی ٹی وی کیمرے بھی نصب کیے گئے۔ کراچی کے 6 کنٹونمنٹ بورڈ کے 42 وارڈز میں 9 خواتین سمیت 343 امیدوار میدان میں تھے، 238 کا تعلق مختلف سیاسی اور مذہبی جماعتوں سے تھا جبکہ 105 امیدوار آزاد حیثیت میں الیکشن لڑرہے تھے۔
کلفٹن کنٹونمنٹ بورڈ میں صدر مملکت عارف علوی، گورنر سندھ عمران اسماعیل سمیت مختلف سیاسی و سماجی شخصیات، اراکین اسمبلی، کھیلوں اور شوبز کے میدان میں شہرت پانے والے کھلاڑیوں اور فنکاروں کے ووٹ بھی موجود ہیں۔ حیدرآباد کنٹونمنٹ بورڈ کی 10 نشستوں پر8 سیاسی ومذہبی جماعتوں کے 54 اور 20 آزاد امیدواروں مدمقابل تھے، 48 ہزار سے زائد مرد و خواتین ووٹرز کے لیے 35 پولنگ اسٹیشن قائم کیے گئے تھے، جن میں سے7 پولنگ اسٹیشن کو انتہائی حساس قرار دیے گئے تھے۔
لاہور اور والٹن کنٹونمنٹ میں 10، 10 وارڈز ہیں جبکہ 20 نشستوں پر 268 امیدوار مدمقابل تھے۔ لاہور کنٹونمنٹ میں 110 جب کہ والٹن میں 158 امیدوار میدان میں اترے ۔ ضلع راولپنڈی کے 5 کنٹونمنٹ بورڈز راولپنڈی، چکلالہ، مری ، ٹیکسلا اور واہ میں بھی پولنگ ہوئی، راولپنڈی، چکلالہ اور واہ کنٹونمنٹ بورڈز میں 10، 10 ، ٹیکسلا کنٹونمنٹ بورڈ میں 5 جب کہ مری بورڈ میں 2 وارڈ ہیں، جہاں 6 لاکھ 64 ہزار 894 رجسٹرڈ ووٹرز کے لئے ایک ہزار 604 پولنگ اسٹیشنز قائم کئے گئے تھے۔
خیبرپختونخوا میں مجموعی طور پر 33 کنٹونمنٹ وارڈز میں انتخابات ہوئے، ایبٹ آباد میں 10، پشاور میں 5، نوشہرہ میں 4، رسالپور اور کوہاٹ میں 3،3 ، مردان، بنوں،ڈی آئی خان اور حویلیاں میں 2،2 نشستوں پر پولنگ کا عمل بالاتعطل مکمل ہوا۔ بلوچستان کے کوئٹہ ، ژوب اور لورالائی کنٹونمنٹ بورڈز کے 9 میں سے 8 وارڈز پر پولنگ ہوئی، کوئٹہ کے 5 وارڈز میں مجموعی طور پر 35 جب کہ ژوب کی 2 نشنستوں پر 7 امیدوار میدان میں تھے، لورالائی کے 2 وارڈز میں سے ایک پر آزاد امیدوار بلا مقابلہ منتخب ہوچکا ہے جب کہ ایک نشست پرپولنگ ہوئی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں